مجھے سنّاٹا پسند نہیں ہے 

WhatsApp Image 2018-09-13 at 6.39.56 PM


ساکت ہوا، ٹھہرا پانی، بوجھل فضا
 
ناپید آنسو، گھٹی چیخیں، جامد خلا
خداوندوں سے گریزاں دعا کی چپ
ہجر کے سفید کفن میں لپٹی امید کی لاش
ذات کے طلسم میں محبوس سیاہ ماتمی صدا
مجھے بے آواز ٹوٹنا پسند نہیں ہے 
مجھے سنّاٹا پسند نہیں ہے

محبّت ایسے سراب کی خاطر
نغمہ بیخودی کو تج دینا
کوچہ دل روشن رکھنے کو
ظلمت شہر کو فراموش کر دینا
اپنے پندار کو نادیدہ اشکوں سے ڈھانپ کر
مجھے تکبّر ذات کا آہنگ پسند نہیں ہے
مجھے سنّاٹا پسند نہیں ہے

اپنے غموں کی شناسایی مہمل کی تڑپ میں
اپنی وفاؤں کو خود سے جدا کرنا
حسرت تعمیر کا غم بھلانے کو
جدّت تدبیر کے بہانے کرنا
وصل ایسے صیّاد کی خاطر
مجھے دشت میں آبلہ پا دوڑنا پسند نہیں ہے
مجھے سنّاٹا پسند نہیں ہے

سکیچ بعنوان “ان دیکھے خواب”

 نظم کہنے کا حوصلہ ۔۔۔

WhatsApp Image 2018-07-29 at 1.30.06 AM

نا تمام خوابوں کی کائنات تلے
چند ذروں سی اک حیات ملی
آس کے بے کراں سمندر میں
پاتال سے سمٹی ہوئی  اک رات ملی
شو خئ قدرت کا ارادہ تو دیکھیے
اوڑھ کرآ گئی اک نظم کا لباس
زرق برق خوب بل کھاتی ہوئی
ہمراہ لئے ذوق زندگی کے باب
اس کی یاد نے بچھا لی چاندنی
ہمراہ سازندوں کے امڈ آ ئی بارات
نظم پھر یوں ہم کلام ہوئی
دل ایسی ویراں بستی میں
گونج اٹھا ہجر کی مغنیہ کا گیت
امنگ جینے کی بھر لائی صراحئ دل
ا نڈیلتی رہی ہمرہی کے  سراب
نظم ا ٹھی اٹھ کےمست والست
کر نےنکلی آگہی کا طواف
پوچھ بیٹھا جو دل کا حال کوئی
نہ بن پایا روح سےکوئی جواب
بے چینی سمیٹ کرآنسو سارے
پروتی رہی تشنگی کےہار
نظم تھک کے کنارے آن گری
روح چھپانے لگی دل کے آزار
چاندنی چھپ گئی اجالے میں
کیوں اٹھاتی پرائے غم کا بار
نظم چپ چاپ اٹھی دبے پاؤں
جا بجھا آئی وصل کی چاہت کے چراغ

Sketch Titled  “اکیلی رات کا تنہا شجرِِ” by Myself …

پری مر نہیں سکتی ۔۔۔

37580899_10216791971542300_3262816732703621120_n

کبھی سنا ہے؟

چاند پر چرخہ کاٹتی بڑھیا

مر گیی ہے

!ہاں

 وقت نام کا خرانٹ بوڑھا

اسے کہیں اٹھا لے گیا ہے

بڑے بچوں کا چاند

سونا کر گیا ہے

کہیں پڑھا ہے ؟

انقلاب نوجوانوں کے دلوں کے

کواڑ ہلا ہلا کر

واپس لوٹ گیا ہو

!ہاں

 ضرورت نا م کا  اژدھا

اسے زندہ نگل گیا ہے

روشن ذہنوں کو

سونا کر گیا ہے

کبھی دیکھا ہے ؟

موسم کی پہلی بارش میں

  جنگلوں میں ناچنے والے مور

لاغر ہو کر

اپنے بد صورت پیروں پر

کھڑے نا ہو پا رہے ہوں

!ہاں

شہروں کا ٹدی دل

پرانے درختوں کی فصل کاٹ کر

کتنی حسرتوں کے مدفنوں پر

پکی قبریں بنا کر

 نئی صلیبیں گاڑگیا ہے

کس نے چاہا تھا؟

درخت کے نیچے کتاب پڑھتی ایلس

کسی ماورائی دنیا سے

ہمیشہ نا بلد رہے

 

کوئی جولیٹ، کوئی ہیر

تھپک کر بچے سلاتے ہویے

ان کو کسی مہربان شہزادے کی کہانی

بنا کر سنا نا چاہے بھی تو

سنا نا پائے ۔۔۔

اب تو یوں ہے کہ

ممتا کی نگہبان پری

بارہ بجے تک کا جادو لے کر

 سب ماٰوں کی قبروں پہ

روتی لڑکیوں کو

دیوانہ وار کھوجتی ہے

آس کا کچا گھڑا

کسی مفلس کے سونے آنگن میں

اپنی اکھڑی سانسوں میں

کسی ضدی مٹیار کا رستہ

بے چینی سے تکتا

بجھتی بھٹی کے سامنے

دم توڑ دیتا ہے

پری مری نہیں ہے

بس چند ادھورے خوابوں کے زندان میں

بوڑھی ہو کر پڑی ہے

کہانی سننےوالے بچے بڑے ہو کر

دور کی وادیوں کی کھوج میں

نکل گیے ہیں

خواب بننے والے دل

ان پہ لادی گئی خواہشوں

کے بوجھ تلے

دب کے کچل گیے ہیں

 

پری مر نہیں سکتی

کہ زندگی کی قید سے آزادی

اس کو امر نا کر پایے گی

ہاں!

 انسانی پاگل پن کا موسم سرما

 جب زنداں کو ڈھیروں برف سے

 ڈھک جایے گا

تو پری کا ناتواں وجود

بے حسی کے سرد کرسٹل میں

حنوط ہو کر

پریوں کی جنس امر کر جایے گا

تمام پریوں کے تمام اسراروں کا فسوں

تمام پہاڑوں کے تمام مہم جووں کے

دلوں میں رہ جایے گا۔۔۔

 

Painting By John Collier Titled ” Priestest of the Oracle at Delphie”

Love’s Scenario

tumblr_mfr1pxw73h1qagdgmo1_500

While we were dreaming about each other

A ray of light was passing up above high

Travelled a million light years

To know what it could make of itself

The star that generated it vanished centuries ago

Left its memories in its transluscent hope

 

While we were dreaming about our future

A tiny bud sprung out of soil emphaticaly

Its fragile soul feeling the warmth of nature around

Forgetting to lament the death of seed inside

Listening to the songs of the morning breeze

Fearing inland the advent of the foremost icles

Carrying content of a thosand seedlings within

 

While we were living our dream together

A sea-shell was bearing the pain of a ripened pearl

Dropping it to the deepest of waters in full bloom

To be found by a valiant diver of unmatched stamina

Aiming to bring the best from the heart of the sea

whose breath stricken chest beating death at every moment

Making the Ocean realize the throne of mankind above

 

While our dream was shattered by fate unavoidable

The last couple of an extinctive specie

Traveling for life towards warmer lands

Bearing the burden of  the darkest of death

Looming over their genetic speciality

Falling into the arms of the howling evolution

Unable to bear their names for the time to come

Trumpting a new dawn without the essence of them…

“Sketch By me”

There Will Be Light

Night-in-Rama-meadows.

 

There will be light

Yes! there will be light

But who knows

I ll have my eyes

Carrying the emotion to suffice

Holding up the striking dreams

Whose reflection gives the meaning

To whatever I arranged in ages

Into the solid figurative masterpieces

Of attainment and sacrifice

To the heaven and hell

How they look gravely like

 

I ll have my heart though

Or maybe not

As I the chooser of the sunken path

If settled on heaviness and glazed with rust

Upon the crusades of my tempestuous self

My dreams and doubts lying as my wrath

Beyond the hinge of winning or loose

Waiting to be jubilantly found as

Haunted with the spirits of light…

 

“Photograph of turists witnessing  a night with celestial lights at Rama Meadows in Korakuram mountain Range in Northern Pakistan.”

What Is Lost…Is Lost

WhatsApp Image 2018-07-12 at 7.40.08 PM

All is not lost though

The sun still shines bright

Reflects vibrantly the curls of her hair

The moonlit enters her window periodically

Touching softly the pages she left unturned

Lovers gaze still fills her body to the necessary warmth

Love has find comfort in the wounds unburned

An escaping moth stays still on the corner of her wall

Lost completely in the silence of the room

Her belongings still smell like her

Her heart still pumps blood

And mind makes the best of stories

Bringing comfort in the chaos of her demolished self

Her lip sings more loudly the songs of thankfulness

Her soul knows it is just a small bump

Meant to let her mend her shoes

And cure the bleeding heels torn like broken dreams

Tears absorbed in pillows still leaves scars

Giving her impulse to hide them in drawer

For there will be questions unanswerable waiting her way

Trading answers with her ego s fall

All is not lost though But what is lost is lost…

 

(My Own Sketch titled” Embracing our own broken self”)

لمحوں کا فسوں

 

27655530_10156090558574476_7696978766431208623_n.jpg

 

ان کی آنکھوں میں منعکس

گنجلک شہروں کےدبیز دھندلکے

بیتی یادوں کے گل و خار عکس

 

ان کی تھکی جلد میں آخری دم

عہد رفتہ کی کہ موہوم سی آس

عہد آیندہ کے عفریت کا غم

 

ان کی باتوں سے ا ٹھتی مانوس مہک

سمندر کی نمکین ہوا سے ہم آہنگ

بڑہا ئے جاتی ہے ان کے لہجے کی کسک

 

ان کے بالوں میں پگھلتا سپیدہ سحر

ان کے پندار کےسیا ہ دھاگوں سے الجھ کر

مجھ سے بس ایک ہی جواب کا منتظر

 

خوشی مل رہی ہے کسی غم کے اندر

یا ہے با عث غم خوشی کا سمندر

جان گسل ہے کھوئی خواہش کی ناکام حسرت

Photograph by Najam Images