نظم کہنے کا حوصلہ ۔۔۔

WhatsApp Image 2018-07-29 at 1.30.06 AM

نا تمام خوابوں کی کائنات تلے
چند ذروں سی اک حیات ملی
آس کے بے کراں سمندر میں
پاتال سے سمٹی ہوئی  اک رات ملی
شو خئ قدرت کا ارادہ تو دیکھیے
اوڑھ کرآ گئی اک نظم کا لباس
زرق برق خوب بل کھاتی ہوئی
ہمراہ لئے ذوق زندگی کے باب
اس کی یاد نے بچھا لی چاندنی
ہمراہ سازندوں کے امڈ آ ئی بارات
نظم پھر یوں ہم کلام ہوئی
دل ایسی ویراں بستی میں
گونج اٹھا ہجر کی مغنیہ کا گیت
امنگ جینے کی بھر لائی صراحئ دل
ا نڈیلتی رہی ہمرہی کے  سراب
نظم ا ٹھی اٹھ کےمست والست
کر نےنکلی آگہی کا طواف
پوچھ بیٹھا جو دل کا حال کوئی
نہ بن پایا روح سےکوئی جواب
بے چینی سمیٹ کرآنسو سارے
پروتی رہی تشنگی کےہار
نظم تھک کے کنارے آن گری
روح چھپانے لگی دل کے آزار
چاندنی چھپ گئی اجالے میں
کیوں اٹھاتی پرائے غم کا بار
نظم چپ چاپ اٹھی دبے پاؤں
جا بجھا آئی وصل کی چاہت کے چراغ

Sketch Titled  “اکیلی رات کا تنہا شجرِِ” by Myself …